• 24News pk

اکستانی بینکوں نے جاری کردہ قرضوں کے 624 ارب روپے اصل زر کی وصولی ایک سال کے لئے مؤخر کی ہے


اسلام آباد ۔ 17 اگست : عالمی مالیاتی فنڈز (آئی ایم ایف) نے کہا ہے کہ کووڈ۔19 کے معاشی اخراجات کو کم کرنے کے لئے پاکستانی بینکوں نے جاری کردہ قرضوں کے 624 ارب روپے اصل زر کی وصولی ایک سال کے لئے مؤخر کی ہے۔ قرضوں کی وصولی میں رعایت پاکستان میں بینکاری کے شعبہ کے استحکام کی عکاسی کرتی ہے۔ آئی ایم ایف کی “پالیسی ایکشن ٹیکن بائی کنٹریز ” رپورٹ کے مطابق عالمی ادارہ نے پاکستان کی جانب سے کورونا وائرس کے بحران سے نمٹنے کے حوالہ سے کئے گئے متعدد اقدامات کے جائزہ کے بعد کہا ہے کہ عالمی وبا کے باعث گزشتہ مالی سال میں معاشی شرح نمو منفی 0.4 فیصد رہی ہے تاہم روں مالی سال کے دوران معاشی بحالی کی توقع ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کے مرکزی بینک نے شرح سود میں کمی کے ساتھ ساتھ بیروزگاری پر قابو پانے، کاروباراور صعنتی شعبہ کی بحالی کے لئے جامع اقدامات کئے ہیں۔ جن میں کووڈ۔19 سے نمٹنے اور صحت کے شعبہ کے لئے آسان شرائط پر 19 ہسپتالوں کو 6 ارب روپے اور مینوفیکچرنگ کے شعبہ میں سرمایہ کاری کے فروغ کے لئے 52 نئے منصوبوں کے لئے 22 ارب روپے کے قرضوں کے علاوہ 2200 اداروں میں کام کرنے والے کارکنوں کے تحفظ کے لئے تنخواہوں کی ادائیگی کی مد میں کم شرح سود پر 138 ارب روپے کے قرضہ جات فراہم کئے ہیں۔ مزید برآں سٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے جاری ہدایات کے مطابق بینکوں نے پہلے سے جاری کئے گئے قرضوں کے اصل زر کی واپسی کی مد میں 624 ارب روپے کی وصولیوں کو ایک سال کے لئے موخر کیا ہے جس سے پاکستان کے بینکاری کیشعبہ کے استحکام کی عکاسی ہوتی ہے۔


Drop Me a Line, Let Me Know What You Think

© 2020 by 24newspk.com all rights reserved