• 24Newspk

” اگر میں محنت نہ کرتا تو راشد لطیف کا۔۔۔“معین خان نے ایسی بات کہہ دی کہ



لاہور (24 نیوز پی کے) قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور وکٹ کیپر بلے باز معین خان نے کہا ہے کہ کرکٹ میچ میں

وکٹ کیپر کا اہم کردار ہوتا ہے ،وکٹ کیپر کی ذمہ داری ہوتی ہے کہ گری ہوئی ٹیم کو اٹھائے اور ٹیم کو جیت کی طرف لے جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ میں اگر محنت نہ کرتا تو راشد لطیف جیسے با صلاحیت وکٹ کیپر کا کبھی بھی مقابلہ نہ کر پاتا۔


تفصیلات کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ نے کورونا وائرس کی وجہ سے میچز اور ٹیم کی پریکٹس نہ ہونے کے بعد ویڈیو لنک کے ذریعے پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کھلاڑیوں سے موجودہ ٹیم پلیئرز کے ساتھ ویڈیو سیشنز کا احتمام کیا ہے جس میں سابق کھلاڑیوں نے بڑے مفیڈ مشورے دیے جو موجودہ کھلاڑیوں کے لئے بڑے مفید ثابت ہونگے۔


اسی سلسلے کے تسلسل میں پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان وکٹ کیپر بلے باز معین خان نے موجودہ پاکستان کرکٹ ٹیم انڈر 19 کے وکٹ کیپر کھلاڑیوں میں جس میں سرفراز احمد ،رضوان احمد اور انڈر 19 کے کپتان اور وکٹ کیپر بیٹسمین روحیل اشرف کے ویڈیو لنک کے ذریعے کیپنگ کرنے مفید مشورے دیے۔معین خان نے بتایا کہ گری ہوئی ٹیم کو سہارا دینا وکٹ کیپر کا کام ہوتا ہے اگر باؤلر کی پٹائی ہو رہی ہوتی تھی تو میں باقی کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی کرنے کے لئے ان سے مذاق کرتا تھا بات کرتا تھا تاکہ ان پر میچ کا پریشر نہ پڑے۔



معین خان نے اس بات زار دیا کہ آج کل وکٹ کیپرز اور باؤلرز میں رابطے کا فقدان ہے ۔رابطے کو مزید بڑھانا چاہیے ۔انہوں اپنا تجربہ شیئر کرتے ہوئے کہا کہ وہ وکٹ کے پیچھے کھڑے ہوکر وسیم اکرم اور شاہد آفریدی کے آنکھوں کے اشارے سمجھ جاتا اور دونوں باؤلر کے ساتھ مل کر کئی بلے بازوں کو پویلین کی راہ دکھائی۔ معین خان نے کہا کہ 1990ءکی دہائی میں راشد لطیف جیسے باصلاحیت وکٹ کیپر سے مقابلہ کرنا بہت مشکل تھا مگر میں نے الزام تراشی یا حیلے بہانے ڈھونڈنے کے بجائے خوداحتسابی پر اعتماد کیا اور یہی وجہ ہے کہ میں آج بھی پاکستان کی جانب سے سب سے زیادہ ایک روزہ میچز کھیلنے والا وکٹ کیپر ہوں۔ میںن سلیم یوسف اور این بیلی سے متاثر تھا ان کی طرح بننا چاہتا تھا۔


معین خان کا کیریئر شاندار رہا وہ 92 ورلڈ کپ کی وننگ ٹیم کا حصہ تھے ،اس کے علاوہ وہ 1999 کے ورلڈ کپ کا فائنل بھی کھیلے بعد وہ ٹیم کے کپتان بھی بنے۔انہوں نے 1990 سے 2004 تک 14 سال کرکٹ کھیلی،معین خان نے 69 ٹیسٹ میچوں میں 2741 رنز بنائے اوروکٹ کے پیچھے 148 شکار کیے۔ایک روزہ کرکٹ میں 219 میچز کھیلے اور 3266 رنز کےساتھ وکٹوں کے پیچھے 287 شکار کیے۔




39 views

Subscribe to 24Newspk 

Contact us

© 2020 by 24newspk.com all rights reserved

  • Facebook
  • Twitter
  • YouTube