• 24Newspk

دھمکیاں ملتی تھی کہ اگر بیان دیا تو بوٹی بوٹی کر دیں گے،جسٹس قیوم کمیشن کے ایک اور گواہ عاقب جاوید



اہور(24 نیوز پی کے ) سابق کرکٹر فاسٹ بالر عاقب جاوید نے نجی ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ جسٹس قیوم کمیشن میں بہت کچھ چھپایا گیا۔ مجھے میچ فکسرز مافیا نے دھمکیاں دی کی اگر آپ نے جاکر بیان دیا اور زبان بند نہ رکھی تو آپ کو جان سے مار دیں گے


عاقب جوید کا مزید کہنا تھا کہ جسٹس قیوم نے خود کہہ چکے ہیں کہ بہت سخت سزائیں ہو سکتی تھی میں نے سوچا کہ یہ قوم کے ہیروز ہیں۔کیوں کہ سلیم ملک کے خلاف بہت سارے الزامات لگے جس کی بنیاد پر انہیں تا حیات پابندی کا سامنا کرنا پڑا اور باقیوں کو جرمانے ہوئے۔


ان کا مزید کہنا تھا کہ بیس سال پہلے میں عدالت کو بتایا تھا کہ فکسنگ کرنے کے لئے ایک کھلاڑی نہیں بلکہ پانچ سے چھ کھلاڑیوں کی ضرورت ہوتی ہے.اس وقت میچ فکسرز مافیا کی طرف سے دھمکیاں ملتی تھی کہ اگر عدالت میں بیان دیا تو بوٹی بوٹی کر دیں گے۔


اگر کوئی کھلاڑی اسپاٹ فکسنگ یا میچ فکسنگ میں پکڑا جاتا ہے تو تاحیات پابندی اور دس سال قید سزا ہے،جو مافیا ہے اس کے وہ ہی دن ہوتے ہیں کمائی کے اور پیسہ بنانے کے،میں حیران ہوں کہ انڈیا جیسا ملک جو اتنا اسٹیبلش ہو گیا ہے اور آئی پی ایل پر بھی سوالات اٹھے جو مافیا کہ گڑھ ہے فکسنگ کا اس کا مین لنک جا کہ انڈیا سے ملتا ہے،پاکستان میں بھی لوگ ہیں۔


آج بھی وہ ہی شور اٹھ رہا ہے فکسنگ کا لیکن اس کا سوچیں جو پیچھے مافیا ہے،آپ ایک دفعہ اپنی مرضی سے اس بزنس میں شامل ہوتے ہو لیکن نکنے کا راستہ نہیں ہے یہ بہت بڑا مافیہ ہے اور آج تک کسی میں جرات نہیں ہوئی کہ کوئی اس کے خلاف ایکشن لیا جاسکے۔



سابق فاسٹ بالر عاقب جاوید نے یہ بھی اعتراض اٹھایا کہ اگرمحمد عامر جب سب کو موقع دیا گیا تو سابق کپتان سلیم ملک کو بھی دینا چاہئے۔ محمد عامر کو ہیرو بنا کر واپس لایا گیا جس سے باقی کھلاڑیوں کو بھی حوصلہ ملا۔

16 views

Subscribe to 24Newspk 

Contact us

© 2020 by 24newspk.com all rights reserved

  • Facebook
  • Twitter
  • YouTube