• 24newspk

شاہنواز دھانی، زاہد محمود اور نعمان علی درحقیقت لاڑکانہ، دادو یا خیر پور کے نہیں پاکستان کے پیرو ہیں


کراچی (24 نیوز پی کے)شاہنواز دھانی، زاہد محمود اور نعمان علی درحقیقت لاڑکانہ، دادو یا خیر پور کے نہیں پاکستان کے پیرو ہیں، بینچوں پر بیٹھنے کے بجائے اپنی صلاحیتوں کی بنیاد پر قومی ٹیم کا مستقل ممبر بننا ان کا حق ہے، بہت جلد ان ہیروز کے اعزاز میں تقریب پزیرائی کا اہتمام کریں گے، نیاز اسٹیڈیم میں کرکٹ اکیڈمی کے قیام کے لئے سمری وزیراعلی کو بھیج دی ہے، کھیلوں کی ترقی میں متوازی ایسوسی ایشن سب سے بڑی رکاوٹ ہے، سندھ گیمز ہمارا ٹائٹل ہے تاہم اس حوالے سے عدلیہ کے فیصلے کا انتظار ہے، نئی صوبائی اسپورٹس پالیسی پر کام جاری ہے، کھیلوں کے فروغ کے لئے سجاس کا کردار اہم ہے۔ سیکریٹری کھیل و امور نوجوانان سندھ اختر عنایت بھرگڑی نے ان خیالات کا اظہار آصف خان کی قیادت میں سجاس کے دس رکنی وفد سے ملاقات کے دوران کیا، اسپورٹس جرنلسٹس ایسوسی ایشن سندھ (سجاس ) کا وفد صدر آصف خان، سیکریٹری اصغر عظیم، سینئر نائب صدر زبیر نذیر خان، نائب صدر محمود ریاض، جوائنٹ سیکریٹری شاہد عثمان ساٹی، مجلس عاملہ کے ارکان مجاہد سولنگی، شاہد انصاری، عمر شاہین، ریاض الدین صدیقی اور پی ایس ڈبلیو ایف کے سینئر نائب صدر سید نصر اقبال پر مشتمل تھا.


ملاقات کے دوران سجاس کے وفد نے سندھ گیمز، بیچ گیمز، فٹبال لیگ کے انعقاد، صوبے میں کھلاڑیوں کے معیار کو بہتر بنانے متوازی ایسوسی ایشن کے خلاف قانون سازی، سندھ کی نئی اسپورٹس پالیسی سمیت ٹریڈیشنل گیمز کے فروغ سمیت دیگر اہم امور پر تبادلہ خیال کیا،ملاقات کے دوران اختر عنایت بھرگڑی نے کہا کہ کھیلوں کے فروغ اور اسپورٹس جرنلسٹس کی خدمت میں سجاس کا کردار اہم اور نمایاں ہے، انہوں نے کامیاب اسپورٹس فیسٹول کی مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ دس روزہ فیسٹول کے انعقاد سے سجاس نے اپنی آرگنائزیشن کی خوبیوں کا بھرپور پور اظہار کیا ہے، سجاس کے ساتھ ملاقات اور مشاورت کا سلسلہ جاری رہے گا۔ سیکریٹری اسپورٹس کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت کے ویژن کے مطابق نئی اسپورٹس پالیسی میں سب اہم کھیل اور کھلاڑیوں کے معیار کو بہتر بنانے پر مرکوز رکھی ہے تاہم سندھ کی اسپورٹس پالیسی پر ابھی کام جاری ہے، نیاز اسٹیڈیم حیدرآباد میں کرکٹ اکیڈمی کے قیام کے لئے سمری وزیراعلی کو بھیج دی ہے، چاہتے ہیں کہ دیگر کھیلوں کے ساتھ صوبے کے نوجوانوں کو کرکٹ اکیڈمی کی سہولت بھی حاصل ہو، ثریڈیشنل گیمز کے حوالے سے پلان زیر غور ہے، پی ایس ایل کے بعد سجاس کے ساتھ مل کر کراچی میں ملاکھڑا اور ونج ونجی ٹورنامنٹ کا انعقاد کریں گے، فٹبال لیگ کا انعقاد ایک بڑا اقدام ہے اس حوالے سے کئی اجلاس منعقد کرچکے ہیں، فٹبال لیگ کے ذریعے غیر ملکی فٹبالرز کو سندھ کے نوجوان اپنے سامنے کھیلتا دیکھ سکیں گے، سندھ گیمز کا ٹائٹل صوبے کا حق ہے، کوئی بھی شخص ہم سے یہ ٹائٹل نہیں لے سکتا تاہم معاملہ عدالت میں ہونے کے باعث سندھ گیمز کے انعقاد میں تاخیر ہورہی ہے، بیچ گیمز کے انعقاد کے لئے اقدامات جاری ہیں تاہم صوبے میں کھیل کی ترقی میں سب سے بڑی رکاوٹ متوازی ایسوسی ایشن ہیں نئی اسپورٹس پالیسی میں اس کا حل بھی شامل ہوگا،


سیکریٹری اسپورٹس نے شکوہ کرتے ہوئے کہا کہ لاڑکانہ، خیر پور، دادو، کراچی، لاہور، پشاور، کوئٹہ ہو یا ملک کا کوئی بھی شہر، کھلاڑیوں کو ان کی صلاحیتوں کے مطابق ان کا حق ملنا چاہیے، شاہنواز دھانی، نعمان علی اور زاہد محمود قومی ہیرو ہیں تاہم انہیں بینچوں پر بیٹھا دیکھ کر دکھ ہوتا ہے، اپنی صلاحیتوں کی بنیاد پر قومی ٹیم کا مستقل رکن ہونا ان کا حق ہے، محکمہ کھیل بہت جلد قومی ہیروز کے اعزاز میں تقریب پزیرائی کا انعقاد کرے گا،


15 views0 comments