top of page
  • 24newspk

قومی ٹیم میں نام آنے کے انتظار میں تھک کر تجربہ کار فرسٹ کلاس کرکٹر نے ریٹائرمنٹ لے لی


24 نیوز پی کے: قومی ٹیم میں نام آنے کے انتظار میں تھک کر تجربہ کار فرسٹ کلاس کرکٹر محمد سعد نے 32 کی عمر میں ریٹائرمنٹ کا اعلان کردیا۔


تفصیلات کے مطابق محمد سعد نے قذافی اسٹیڈیم میں قائداعظم ٹرافی کے میچ کے دوران ریٹائرمنٹ کا فیصلہ کیا۔محمد سعد کے اچانک فیصلے سے ساتھی کھلاڑی بھی حیران رہ گئے۔فرسٹ کلاس کرکٹر نے آخری میچ سینٹرل پنجاب کی جانب سے سدرن پنجاب کے خلاف کھیلا، اور اپنی آخری فرسٹ کلاس اننگز میں 182 رنز بھی بنائے۔



محمد سعد نے 123 فرسٹ کلاس میچز میں 33.62 کی اوسط سے 6389 رنز بنائے۔محمد سعد کا کہنا تھا کہ انٹرنیشل کرکٹ میں موقع ملنے کی امید ختم ہونے کے خدشے پر ریٹائرمنٹ کا فیصلہ کیا۔انہوں نے ساتھی کھلاڑیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’مجھے نہیں لگتا کہ اب مجھے موقع مل سکتا ہے، اس لیے اب کیا فائدہ۔‘


محمد سعد نے یہ بھی کہا کہ اگلے سیزن میں پھر 10 میچز کھیلنے سے کیا حاصل ہوگا؟ اس لیے اب بس۔محمد سعد سے ساتھی کھلاڑیوں نے نیک خواہشات کا اظہار کیا جبکہ آخری اننگز کے بعد اپنی ٹیم کے علاوہ حریف ٹیم کے کھلاڑیوں نے بھی انہیں زبردست انداز میں خراج تحسین پیش کیا۔

24Newspk: Tired of waiting to be named in the national team, veteran first-class cricketer Muhammad Saad announced his retirement at the age of 32.


According to the details, Mohammad Saad decided to retire during the Quaid-e-Azam Trophy match at Gaddafi Stadium. The fellow players were also surprised by the sudden decision of Mohammad Saad. The first-class cricketer played the last match against Southern Punjab on behalf of Central Punjab. And also scored 182 runs in his last first-class innings.


Muhammad Saad scored 6389 runs in 123 first-class matches at an average of 33.62. Muhammad Saad said that he decided to retire because he feared that his hope of getting a chance in international cricket would end. He said while talking to his fellow players that ' I don't think I can get a chance now, so what's the point.'


Muhammad Saad also said that what will be gained by playing 10 matches again in the next season? That's it for now. Muhammad Saad was wished well by his fellow players, while after the last innings, apart from his own team, the players of the rival team also paid tribute to him in a great way.

96 views0 comments
bottom of page