• 24News pk

وزارت انسانی حقوق نے ”پاکستان میں کووڈ 19 اور آفات میں عدم تحفظ ۔ انسانی حقوق کی بنیاد پر ایک تجزیہ“


اسلام آباد۔3فروری (24 نیوز پی کے-اے پی پی):وزارت انسانی حقوق نے اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام (یو این ڈی پی) کے اشتراک سے ”پاکستان میں کووڈ 19 اور آفات میں عدم تحفظ ۔ انسانی حقوق کی بنیاد پر ایک تجزیہ“ کے عنوان سے رپورٹ جاری کر دی۔ رپورٹ میں کووڈ 19 وباءکے حوالے سے حکومتی سطح پر پاکستان کے جوابی اقدامات کا جامع اور مضبوط فریم ورک اجاگر کیا گیا ہے۔ رپورٹ کے اجراءکے موقع پر ایک پینل مباحثہ بھی منعقد ہوا جس کی میزبانی کے فرائض وفاقی وزیر انسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری نے انجام دیئے جبکہ شرکاءمیں وفاقی وزیر منصوبہ بندی، ترقی و خصوصی اقدامات اسد عمر، پاکستان میں یو این ڈی پی کے چیف ٹیکنیکل ایڈوائزر دئیتر ولکوٹز اور یو این ڈی پی کی ڈپٹی ریذیڈنٹ نمائندہ مس الیونا نکولیتا شامل تھے۔ رپورٹ میں پاکستان کی جانب سے کووڈ 19 پر قومی رد عمل، اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کی جانب سے اپریل 2020ءمیں رہنما نوٹ ”کووڈ 19 اور انسانی حقوق ۔ ہم سب اس میں ساتھ ہیں“ میں اجاگر کئے گئے آٹھ ترجیحی موضوعاتی شعبوں کے مطابق تجزیہ کیا گیا ہے۔ زیر تجزیہ ترجیحی موضوعاتی شعبہ جات میں صحت، روزگار، بے روزگاری، تعلیم، خوراک، سیکورٹی، صنفی بنیاد پر تشدد، بچوں کے حقوق کا تحفظ، مہاجرت، پناہ گزینی اور جیلیں شامل ہیں۔


رپورٹ ان تمام شعبوں میں حکومت کے اقدامات کو واضح کرتے ہوئے ان میں پائے جانیوالے مواقع، کووڈ 19 اور پاکستان میں اس آفت کی یلغار کو انسانی حقوق کی بنیاد پر طریقہ کار کو یقینی بنانے کے لئے سفارشات پیش کی گئی ہیں۔ملکی آبادی کے تقریباً تمام طبقات کے زیادہ خطرے کے شکار گروپوں کی نشاندہی بھی اس رپورٹ کا حصہ ہے۔ رپورٹ میں قومی اور صوبائی سطحوں پر پاکستان کے متعلقہ حکام کے لئے انسانی حقوق کو تحفظ اور ترجیح دینے کے لئے مختصر اور درمیانی مدت کی تجاویز بھی شامل ہیں۔ رپورٹ میں صورتحال کا تقابلی تجزیہ کرنے اور ممکنہ خامیوں اور کوتاہیوں کو دور کرنے کے لئے ایک مضبوط روڈ میپ اور جامع حکمت عملی وضع کرنے کے لئے ترقی یافتہ ممالک کے طریق کار اور روایات کو جانچنے کی بھی کوشش کی گئی ہے۔ رپورٹ کے اجرا کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری نے کہا کہ حکومت، پاکستان اور دنیا بھر میں لوگوں کی زندگیوں اور رہن سہن پر کووڈ 19 کے باعث مرتب ہونے والے کثیر الجہت اثرات سے واقف ہے۔ ہماری رپورٹ اس بحران کو انسانی حقوق کے تناظر میں دیکھتی ہے تاکہ اس وباءکے خلاف اٹھائے جانے والے اقدامات صرف اور صرف عوامی مفاد کے گرد گھومیں۔ انہوں نے کہا کہ رپورٹ میں پیش کی گئی مجوزہ سفارشات صرف اس وباءکے دوران انسانی حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے نہیں ہیں بلکہ ان میں پاکستان کو مستقبل میں پیش آنے والی کسی بھی ممکنہ ہنگامی صورتحال میں انسانی حقوق کے تحفظ کے لئے روڈ میپ کے طور پر بروئے کار لانے کی صلاحیت بھی موجود ہے۔


وزیر برائے منصوبہ بندی، ترقی و خصوصی اقدامات اسد عمر نے کہا کہ ہمیں کووڈ 19 وبائی مرض سے سیکھے گئے عمل کو دستاویزی شکل دینے کی ضرورت ہے تاکہ ہم ایک ایسی قومی پالیسی تیار کر سکیں جو ہمارے موجودہ جوابی اقدامات کی خامیوں اور کوتاہیوں کو دور کرنے میں مددگار ہو اور ہم مستقبل میں ممکنہ ہنگامی صورتحال سے زیادہ موثر طور پر نمٹنے کے قابل ہوں۔ وزارت انسانی حقوق کے سیکریٹری انعام اﷲ خان نے اس موقع پر کہا کہ وزارت انسانی حقوق کی تحقیقی رپورٹ میں کوڈ 19 کے وبائی مرض کے بارے میں پاکستان کے قومی ردعمل کی غیر معمولی کامیابیوں، غیر ارادی اثرات اور خامیوں پر بھی روشنی ڈالی گئی ہے۔ اس میں رہنمائی اور سفارشات کیلئے ایک ایسے وسطی و طویل المدتی نقطہ نظر کو اپنایا گیا ہے جو پسماندہ طبقات کے حقوق کی حفاظت کو بلا امتیاز جنس، معاشرتی حیثیت، جغرافیائی محل وقوع، عمر اور معذوری یقینی بناتا ہے۔ اس موقع پر اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام (یو این ڈی پی) کی ڈپٹی ریذیڈنٹ نمائندہ مس الیونا نکولیتا نے اہم ترین تحقیق کے لئے وزارت انسانی حقوق کے ساتھ یو این ڈی پی کے تعاون پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ اس رپورٹ میں پیش کی گئی تجاویز حکومت پاکستان، اقوام متحدہ کے اداروں اور دیگر ڈویلپمنٹ پارٹنرز کو کووڈ 19 کے حوالے سے جوابی اقدامات بشمول ویکسی نیشن مہم اور مستقبل میں کسی بھی نوعیت کے ہنگامی حالات میں رہنمائی فراہم کریں گی۔

4 views0 comments

Subscribe to 24Newspk

Its all about urdu news

  • Twitter
  • Facebook
  • Linkedin

© 2021 by 24newspk.com all rights reserved