• 24newspk

پاکستان میں کرکٹ کی تاریخ

Updated: Aug 1


کرکٹ پاکستان میں نہ صرف ایک کھیل ہے جو پورے ملک کو متحد کرتا ہے،کرکٹ کی وجہ سے روڈ کھالی ہوجاتے ہیں لوگ اپنا کاروبار بند کر دیتے ہیں اور پورا پاکستان میچ دیکھنے کے لئے ٹی وی اور ریڈیو کے سامنے بیٹھ جا تے ہیں ،کرکٹ کی وجہ سے وقتی طور پر لوگ جذباتی ہو جاتے ہیں پاکستان کی شکست کی صورت میں لڑ پڑتے ہیں اور اپنے ٹی بھی توڑ دیتے ہیں اور جیت کی صورت میں آپس میں ناراض لوگ بھی گلے ملتے ہیں اور خوشیاں مناتے ہیں۔ 1947 میں پاکستان کے قیام کے بعد سے کرکٹ نے ملک میں کئی اتار چڑھاؤ دیکھے ہیں۔ 1992 میں ون ڈے ورلڈ کپ، 2009 میں ٹی 20 آئی ورلڈ کپ جیتنے سے لے کر فکسنگ اسکینڈلز کی زد میں آنے تک، پاکستان نے کرکٹ کی دنیا میں ایک حسابی قوت بننے کے لیے ہر اس چیز کا سامنا کیا ہے جو ان کی تھالی میں پیش کی جاتی ہے۔ آئیے پاکستان میں تمام فارمیٹس میں کرکٹ کی تاریخ پر ایک نظر ڈالتے ہیں۔


ملک کے آزاد ہونے سے 12 سال پہلے، پاکستان نے کراچی میں اپنے پہلے کرکٹ میچ کی میزبانی سندھ میں غلام محمد کی قیادت میں اور فرینک ٹیرنٹ کی قیادت میں آسٹریلوی کرکٹ ٹیم کے درمیان کی تھی۔ اس وقت 5000 سے زیادہ کراچی والوں نے اس ایونٹ کا تجربہ کیا۔ 1947 میں ملک کی آزادی کے بعد کرکٹ کی ترقی تیزی سے شروع ہوئی۔ 1951 میں، پاکستان کرکٹ ٹیم نے نائجل ہاورڈ کی ایم سی سی ٹیم کے خلاف اپنی قابلیت کا مظاہرہ کیا۔ لارڈز میں امپیریل کرکٹ کانفرنس (جسے اب انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کہا جاتا ہے) کے اجلاس میں ہندوستان کی سفارش کے بعد پاکستان کو ٹیسٹ میچ کا درجہ دیا گیا۔ اس وقت تک پاکستان کی صرف دو ٹرف وکٹیں تھیں۔



جولائی 1953 میں، آئی سی سی نے پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کو کرکٹ کی دنیا کا حصہ تسلیم کیا۔ سالوں کے دوران، پی سی بی نے تمام ڈومیسٹک ٹورنامنٹس کو کنٹرول کرنا شروع کیا۔ پی سی بی اب قائداعظم ٹرافی (فرسٹ کلاس کرکٹ)، پاکستان کپ (لسٹ اے کرکٹ)، اور نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ (ٹی ٹوئنٹی) کا اہتمام کرتا ہے۔ ڈومیسٹک ٹورنامنٹس کے متوازی، پی سی بی پاکستان سپر لیگ کا بھی اہتمام کرتا ہے – ایک انٹرسٹی فرنچائز T20 ٹورنامنٹ۔


1952 سے پاکستان نے بہت سے لیجنڈز پیدا کیے جن میں حنیف محمد، فضل محمود، عمران خان، وسیم اکرم، وقار یونس،جاوید میانداد،شعیب اختر،سعید انور، شاہد آفریدی، ثقلین مشتاق ثنا میر اور بہت سے دوسرے شامل ہیں۔ پاکستان کرکٹ نے اپنی ٹرافیوں کی فہرست میں 2 ورلڈ کپ اور ایک چیمپیئنز ٹرافی شامل کر کے اپنی قابلیت ثابت کر دی ہے۔ 1997 میں جب پاکستانی خواتین کرکٹ ٹیم نے نیوزی لینڈ کے خلاف بین الاقوامی کرکٹ میں ڈیبیو کیا تو پاکستان نے اپنی ٹوپی پر ایک نیا پنکھ ڈالا۔


ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ


1952 میں پاکستان نے اپنا پہلا ٹیسٹ کھیلنے کے لیے بھارت کا دورہ کیا۔ پہلا ٹیسٹ 16 اکتوبر کو دہلی میں شروع ہوا۔ پاکستان اپنا پہلا ٹیسٹ پہلی اننگز میں بھارت کے 372 رنز کے تعاقب میں ایک اننگز اور 70 رنز سے ہار گیا۔ لیکن وہ لکھنؤ میں دوسرے ٹیسٹ میں مضبوط واپس آئے۔ پہلی اننگز میں بھارت کو 106 رنز پر محدود کرنے کے بعد، فضل محمود کی 5 وکٹوں کی بدولت پاکستان نے بورڈ پر 331 رنز بنائے۔ نذر محمد نے ناقابل شکست 124 رنز بنائے اور سنچری بنانے والے پہلے پاکستانی کھلاڑی بن گئے۔ پاکستان نے بھارت کو 182 رنز پر آؤٹ کر کے ٹیسٹ اننگز اور 43 رنز سے جیت لیا۔ فضل محمود 42 کے عوض 7 وکٹیں لے کر ایک بار پھر متاثر کن رہے۔ بدقسمتی سے پاکستان سیریز 2-1 سے ہار گیا۔



1954 میں، پاکستان نے 4 میچوں کی ٹیسٹ سیریز کے لیے انگلینڈ کا سفر کیا اور انگلینڈ میں پہلے دورے پر ٹیسٹ جیتنے والی واحد ٹیم بن گئی۔ پاکستان نے اوول میں چوتھا ٹیسٹ 24 رنز سے جیت کر سیریز برابر کر دی۔ 1954 سے 1958 کے اوائل تک پاکستان نے کوئی سیریز نہیں ہاری اور گھر پر بھی ناقابل شکست رہی۔ انہوں نے ہندوستان (0-0) سے ڈرا، نیوزی لینڈ (2-0) اور آسٹریلیا (1-0) کے خلاف کامیابی حاصل کی۔ کیریبین کے اپنے اگلے دورے پر، حنیف محمد پاکستان کے پہلے اور مجموعی طور پر چھٹے کھلاڑی بن گئے جنہوں نے مسلسل 9 سیشنز تک بیٹنگ کرتے ہوئے ٹرپل سنچری بنائی۔



حنیف محمد – پاکستان کے پہلے ٹرپل سنچری




1970-79 کے درمیان، پاکستان ٹیسٹ کرکٹ نے کچھ کم برابری کے نتائج حاصل کیے۔ انہوں نے 44 ٹیسٹ کھیلے، 9 جیتے، 12 ہارے اور 23 ڈرا ہوئے۔ تاہم، انہوں نے اگلی دہائی میں بہت سی کامیابیاں حاصل کیں۔ انہوں نے جو 81 ٹیسٹ کھیلے ان میں سے 22 جیتے، 13 ہارے اور 46 ڈرا رہے۔ 1999 میں پاکستان نے فائنل میں سری لنکا کو اننگز اور 175 رنز سے شکست دے کر ایشین ٹیسٹ چیمپئن شپ جیت لی۔ 2006 کا کیلنڈر سال پاکستانی کرکٹر محمد یوسف کے لیے ریکارڈ بک میں شامل ہوا۔ یوسف نے 11 ٹیسٹ کی 19 اننگز میں 99.33 کی اوسط سے 1788 رنز بنائے۔ اس سال انہوں نے 9 سنچریاں اسکور کیں جن میں 223 کی ذاتی بہترین سنچریاں بھی شامل تھیں۔




2009 میں لاہور میں سری لنکن کھلاڑیوں کے ساتھ جانے والی بس پر دہشت گردوں نے حملہ کیا تھا جس میں دو لنکن کھلاڑی زخمی ہوئے تھے۔ ٹیموں کی جانب سے پاکستان کا سفر مسترد کرنے کے بعد یہ پاکستان کو بہت مہنگا پڑا۔ 2010 میں پاکستان کرکٹ اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل کی زد میں آگئی جس کے نتیجے میں سلمان بٹ اور محمد آصف پر تاحیات پابندی عائد کردی گئی جبکہ محمد عامر پر 5 سال کی پابندی عائد کردی گئی۔ پی سی بی نے نئی شروعات کے لیے کپتانی مصباح الحق کو سونپ دی۔ مصباح نے اپنی پہلی 7 سیریز میں 5 جیتے اور 2 ڈرا کیے۔ انہوں نے متحدہ عرب امارات میں پہلی بار انگلینڈ کو وائٹ واش کیا۔


2016 تک پاکستان آئی سی سی رینکنگ میں ٹاپ پوزیشن پر پہنچ گیا۔ انہوں نے مسلسل 3 سیریز جیتیں اور انگلینڈ کے خلاف چوتھا میچ ڈرا کیا جس میں لارڈز پر 75 رنز سے یادگار فتح شامل تھی جس میں کھیل کے صرف 3 منٹ باقی تھے۔فی الحال، پاکستان آئی سی سی ٹیسٹ چیمپئن شپ کی پہلی قسط میں چھٹے نمبر پر آنے کے بعد پانچویں نمبر پر ہے۔ اب تک کھیلے گئے 446 ٹیسٹوں میں اس نے 142 جیتے، 133 ہارے اور 162 ڈرا ہوئے۔



پاکستانی کھلاڑی 2016 میں لارڈز میں فتح کا جشن مناتے ہوئے


ایک روزہ کرکٹ میں کارکردگی


پاکستان نے 1972 میں ون ڈے کرکٹ کی دنیا میں چھلانگ لگائی۔ فروری 1972 میں اس نے اپنا پہلا ون ڈے نیوزی لینڈ کے خلاف کھیلا لیکن 188 رنز کے ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے اسے 22 رنز سے شکست ہوئی۔ ڈیڑھ سال بعد، انہوں نے انگلینڈ کا سفر کیا اور انہیں 2-0 سے شکست دی، اس طرح ان کی پہلی ون ڈے جیت اور سیریز جیتی۔ افتتاحی ورلڈ کپ 1975 میں، انہوں نے آخری گروپ مرحلے کے کھیل میں سری لنکا کو 192 رنز سے شکست دے کر اپنی پہلی فتح درج کی۔


1986 میں پاکستان نے پہلا آسٹریلوی ایشیا کپ جیتا تھا۔ فائنل پاکستان ون ڈے کرکٹ کی تاریخ کا سب سے یادگار بن گیا۔ اپنے حریف بھارت کے خلاف کھیلتے ہوئے، پاکستان کو کھیل کی آخری گیند پر 4 رنز درکار تھے اور اس کی صرف ایک وکٹ باقی تھی۔ چیتن شرما کی آخری گیند پر جاوید میانداد نے چھکا لگا کر کپ جیتا۔



میانداد نے فائنل کی آخری گیند پر چھکا مارا


پاکستان ورلڈ کپ کے مسلسل تین ایڈیشنز (1979، 1983، 1987) کے سیمی فائنل میں پہنچا۔ یہ 1992 کا آئی سی سی ورلڈ کپ تھا جہاں پاکستان کرکٹ ٹیم ون ڈے کرکٹ کے ورلڈ کپ کے فائنل میں پہنچی تھی۔ کپتان عمران خان کی قیادت میں اپنی ٹیم نے اپنا پہلا اور واحد ون ڈے ورلڈ کپ جیتا۔ پاکستان نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے خان اور میانداد کی نصف سنچریوں کی بدولت 250 رنز کا ہدف دیا۔ انہوں نے انگلینڈ کو 227 رنز پر آؤٹ کر کے فائنل میں 22 رنز سے کامیابی حاصل کی۔ وسیم اکرم کو 49 رنز کے عوض 3 وکٹیں لینے پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔





پاکستان ورلڈ کپ 1999 کے فائنل میں پہنچا تھا لیکن اسے آسٹریلیا کے ہاتھوں شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ 2007 کے ورلڈ کپ میں پاکستان آئرلینڈ سے ہارنے کے بعد گروپ مرحلے سے باہر ہو گیا۔ پاکستان کے کریش آؤٹ کے ایک دن بعد کوچ باب وولمر کی متنازعہ موت نے پاکستان کرکٹ کو بری طرح متاثر کیا۔ 2011 کے ون ڈے ورلڈ کپ میں پاکستان کو سیمی فائنل میں بھارت کے ہاتھوں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ لیکن انہوں نے آئی سی سی چیمپئنز ٹرافی 2017 میں بدلہ لے لیا۔اوول میں پاکستان نے فخر زمان کی سنچری سے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 338 رنز بنائے۔ محمد عامر اور حسن علی نے 3،3 وکٹیں لے کر بھارت کو 158 پر آؤٹ کر دیا۔ پاکستان نے فائنل 180 رنز سے جیت کر پہلی آئی سی سی چیمپئنز ٹرافی جیت لی۔





ٹی 20 انٹرنیشنل کی تاریخ


28 اگست 2006 کو پاکستان نے اپنا پہلا T20I کھیلا۔ انہوں نے برسٹل میں 145 رنز کے تعاقب میں انگلینڈ کو 13 گیندیں باقی رہ کر 5 وکٹوں سے شکست دی۔ 2007 میں جنوبی افریقہ نے پاکستان کو پہلی شکست دی۔ پاکستان نے 130 رنز کا ہدف دیا جسے میزبان ٹیم نے بغیر کسی نقصان کے پورا کر لیا۔ پاکستان نے پہلا آئی سی سی ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ جنوبی افریقہ میں کھیلا اور فائنل تک رسائی حاصل کی۔ کیل کاٹنے والے کھیل میں بھارت نے 158 رنز کا ہدف دیا۔ پاکستان ہدف کے تعاقب کے اتنے قریب پہنچا کہ کھیل کی آخری 4 گیندوں پر 6 رنز درکار تھے۔ مصباح الحق کے ایک غلط انداز میں شاٹ نے ٹیم اور شائقین کے دل توڑ دیے۔



انگلینڈ میں ہونے والے ورلڈ کپ کے دوسرے ایڈیشن کے فائنل میں پاکستان نے سری لنکا کو 8 وکٹوں سے شکست دے کر اپنا پہلا ٹی ٹوئنٹی ٹائٹل اپنے نام کر لیا۔ سری لنکا نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 6 وکٹوں کے نقصان پر 138 رنز بنائے۔ پاکستانی آل راؤنڈر شاہد آفریدی نے 40 گیندوں میں 54 رنز بنا کر 8 وکٹیں اور 8 گیندیں باقی رکھ کر ورلڈ کپ جیت لیا۔



اگلے ورلڈ کپ میں، وہ سیمی فائنل میں پہنچے اور آسٹریلیا کے خلاف 192 رنز کا ہدف دیا۔ لیکن مائیکل ہسی کے 24 گیندوں پر 64 رنز نے ان کے تیسرے فائنل میں شرکت کے امکانات کو توڑ دیا اور یوں انگلینڈ کو ٹائٹل تسلیم کر لیا۔ پاکستان کو 2012 کے آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں بھی اسی نتیجے کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ اس بار اسے سیمی فائنل میں سری لنکا کے ہاتھوں 16 رنز سے شکست ہوئی۔


2014 اور 2016 کی مہمات اس وقت تباہی کا شکار ہوئیں جب پاکستان آئی سی سی ورلڈ T20I کے آغاز کے بعد پہلی بار سیمی فائنل کے لیے کوالیفائی کرنے میں ناکام رہا۔ وہ 2016 کی مہم میں اپنے تمام گروپ مرحلے کے کھیل ہار گئے۔ 2018 میں، آئی سی سی نے 2015-16 اور 2016-17 کے نتائج کی بنیاد پر T20I رینکنگ کواپ ڈیٹ کیا جس میں پاکستان نے 130 پوائنٹس کے ساتھ ٹیبل میں پہلی پوزیشن حاصل کی۔


فی الحال، پاکستان ICC T20I پوائنٹس ٹیبل میں دوسرے نمبر پر ہے اور آسٹریلیا میں منعقد ہونے والے آئی سی سی ورلڈ کپ 2022 میں شرکت کے لیے تیار ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ نے ٹی 20 کے ڈھانچے کو بہتر بنانے کے لیے 2016 میں اپنی انٹرنیشنل لیگ کرکٹ کا آغاز کیا جس کا نام پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل ) رکھا گیا ، جس میں دنیا کے بہترین کرکٹرز نے شرکت کی۔پی ایس ایل کے اب تک سات ایڈیشن کھیلے جا چکے ہیں ۔



789 views0 comments